کامیاب ترین انسانوں کی کہانی



جب بھی ہم اپنی زندگی میں کچھ بڑا کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو ہمیں ہزار پریشانیاں نظر آتی ہیں۔
اور ان پریشانیاں کے ڈر سے ہم کوئی بڑا کام نہیں کر پاتے۔
زندگی میں جو بھی انسان برا بنا ہے وہ ان پریشانیوں کا سامنا کرنے کے بعد ہی بنا ہے۔ مقابلہ کرنے کے بعد ہی بنا ہے محنت کرنے کے بعد ہی بنا ہے کبھی نہ ہار ماننے والے کے جذبے کے بعد ہی بنا ہے۔
آج میں آپ کے ساتھ کچھ ایسے ہی لوگوں کی سٹوری شیئر کروں گا۔
جو اپنے بچپن سے ہی غریب تھے۔ کبھی رینٹ کے مکان پر رہتے تھے اور کبھی سڑک پر۔
لیکن انہوں نے ہار نہیں مانی۔
انہوں نے بار بار کوشش کی۔
اور آخر میں وہ کامیاب ہو گئے۔


چلیں شروع کرتے ہیں۔ ایڈیسن سے۔

اس کی زندگی بھی نقصان اور ناکامیوں سے بڑی پری تھی۔ یہ سب جانتے ہیں۔ کہ اس نے ایک ہزار بار کوشش کی پھر جا کر بلب بنا۔
کسی نے پوچھا جب آپ ایک ہزار بار نکام ہوئے۔ تب آپ کو کیسا لگا۔ اس نے کہا بلب بنا ایک ایسی چیز تھی۔ جس کو بنانے کے لیے ایک ہزار بار تجربہ کرنا تھا فیل ہونا تھا کوشش کرنی تھی۔
اس نے ہمیں موٹیویٹ کرنے کے لئے ایک اور بات کی۔ اس نے کہا آپ کوشش کریں۔ چاہے ناکام ہو جائیں۔ ایک بار پھر کوشش کریں۔ بار بار کوشش کریں۔ کیونکہ اسی سے کامیابی کا راستہ نکلتا ہے۔
جو لوگ ناکامی کو خوشی سے گلے لگاتے ہیں۔ وہی لوگ عظیم کامیابی حاصل کرتے ہیں۔ اور یہی لوگ کامیابی کے حقدار ہیں۔
ہار مان لینا۔یہ ہماری سب سے بڑی کمزوری ہے۔ کامیابی کا ایک ہی طریقہ ہے۔ کہ بار بار کوشش کی جائے۔ 

دنیا کا سب سے بڑا سائنسدان آئن سٹائن۔
جب پیدا ہوا تو چار سال کی عمر تک کوئی الفاظ نھیں بول سکا۔ سات سال تک پڑھائی نہیں کرسکا۔ سکول والوں نے اسے یہ کہہ کر نکال دیا کہ تم خوابوں کی دنیا میں رہنے والے بچے ہو۔
اب اس کے پاس دو راستے تھے یا تو زندگی سے مایوس ہو جاتا اور گمنامی کی زندگی گزارتا لیکن اس نے کوشش کی، جدوجہد کی، محنت کی اور دنیا کا سب سے بڑا سائنسدان بنا۔

 جیک ماں
کون نہیں جانتا یہ علی بابا کا فاؤنڈر ہے۔ اور ان کا نام دنیا کے کامیاب انسانوں میں شامل ہے۔ لیکن کیا آپ کو ان کی پوری کہانی پتا ہے۔ انہوں نے اپنی کرئیر کی شروعات میں تیس سے زیادہ انٹرویو دیا جن سب میں وہ فیل ہوئے۔
یہ تو ان کی بڑی پریشانیوں میں سے ایک تھی جس کے بعد بھی انہوں نے ہار نہیں مانی اور  آج علی بابا کے فاؤنڈر بنا۔


اب تک جتنے بھی لوگ کامیاب ہوئے ہیں۔ اگر میں ان کی کامیابی کی وجہ صرف ایک لائن میں بتاو۔ انسان کے لئے ہر کام ناممکن ہے۔ جب تک وہ اسے پورا نہیں کرلیتا۔ لوگ آپ کو کہیں گے کہ آپ یہ کام نہیں کر سکتے۔ لیکن جب آپ وہ کام کر لیتے ہو تو وہی لوگ آپ سے پوچھیں گے۔ کہ آپ نے یہ کام کیسے کیا۔

0 Comments: